طریقہ تبلیغ کیسا ہونا چاہیے؟ ڈاکٹر فرحت ہاشمی حفظہا اللہ

آزاد نے 'اسلامی متفرقات' میں ‏فروری 27, 2012 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. آزاد

    آزاد ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏دسمبر 21, 2007
    پیغامات:
    4,562
    [يَا أَيُّهَا النَّبِيُّ جَاهِدِ الْكُفَّارَ وَالْمُنَافِقِينَ وَاغْلُظْ عَلَيْهِمْ وَمَأْوَاهُمْ جَهَنَّمُ وَبِئْسَ الْمَصِيرُ [التوبة : 73]] اے نبی ﷺ! کفار اور منافقین دونوں سےپوری قوت سے مقابلہ کرو اور ان کے ساتھ سختی سے پیش آؤ ۔جہاد کا یہاں مزید مفہوم واضح ہورہا ہے۔ کفار سے جہاد تو آپ نے قتال کی شکل میں کیا لیکن منافقین سے آپ نے کوئی جنگ نہیں کی تو پھر اس آیت کا کیا مطلب ہوگا کہ منافقین سے جہاد کیجئے؟ یہاں جہاد جنگ کے معنوں میں استعمال نہیں ہورہا۔ اس میں ابن عباس رضی اللہ عنہ کی روایت ہے، تفسیر قرطبی میں آتی ہے کہ : ‘‘[FONT="Al_Mushaf"]أمر بالجہاد مع المنافقین باللسان وشدۃ الزجر والتغلیظ’’ کہ اللہ تعالیٰ نے نبی ﷺ کو منافقین کے ساتھ جس جہاد کا حکم دیا ہے، وہ زبان کے ساتھ ہے یعنی ان کو وعظ و نصیحت اور ان کو سمجھانا‘‘[FONT="Al_Mushaf"]وشدۃ الزجر والتغلیظ[/FONT]’’اور فرملی firmly بات کرنا ان کے ساتھ، یعنی زجر ہوتا ہے: ڈانٹ ڈپٹ اور تغلیظ یعنی سختی اورسختی کا مطلب یہ نہیں کہ بہت غصہ اور اس طرح کی بد اخلاقی، نبی ﷺ نے کبھی منافقین سے بھی بد اخلاقی نہیں کی تھی۔ آپ کسی اصول پر پکے ہوسکتے ہیں بد اخلاق ہوئے بغیر اور یہی اخلاق ہم سب کو سیکھنے کی ضرورت ہے۔ یعنی اپنے پرنسپلز، اپنے اصولوں کے ساتھ آپ جم جائیے، firm ہوجائیے لیکن بداخلاقی سے پرہیز کیجئے۔ کیونکہ مؤمن جو ہے، وہ طعّان اور لعّان نہیں ہوتا، فحش گفتگو کرنے والا نہیں ہوتا۔ کہیں بھی نہیں پتہ چلتا کہ آپﷺ نے جب منافقین سے جہادکیا لسان کا یا وعظ ونصیحت کا تو اس میں ایسی سختی کی ہو کہ نعوذ باللہ بداخلاقی لازم آتی ہو۔ [وَإِنَّكَ لَعَلى خُلُقٍ عَظِيمٍ [القلم : 4]]یہی سنت جب تک ہم نہیں اپنائیں گے، تب تک دین کو ترقی نہیں ہوسکتی۔بعض اوقات ہم نصیحت کے شوق میں، دوسرے کو وعظ وتبلیغ کے شوق میں سخت زبان استعمال کرنا شروع کردیتے ہیں ۔ یہ آپﷺ کا طریقہ نہیں تھا۔ آج کے دور میں بہت سے دین کی تبلیغ کرنے والے یہیں سے ناکام ہوجاتے ہیں۔ اچھا، دور نہ جائیں، ہم اپنی مثال لیتے ہیں، گھر وں میں جب ہم اپنے بچوں کو وعظ و تلقین کرتے ہیں تو اس وقت ہم کتنے اخلاق کا مظاہرہ کرتے ہیں۔ اور [وَاغْلُظْ عَلَيْهِمْ ] کا مطلب کیا ہے؟ فرم firm رہیے۔ کیونکہ منافقین کیا چاہتے ہیں؟کہ ہم اپنے دین پر قائم نہ رہیں۔ ان کی باتوں میں آکر، ان کے طعنوں میں آکر ، ان کے پھسلانے میں آکر پھسلنا نہیں ، اپنے موقف پر قائم رہنا ہے[وَمَأْوَاهُمْ جَهَنَّمُ ]اور ان کا ٹھکانا تو جہنم ہے [وَبِئْسَ الْمَصِيرُ]اور وہ بہت برا ٹھکانہ ہے۔


    ماخذ
    [/FONT]
     
  2. اہل الحدیث

    اہل الحدیث -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 24, 2009
    پیغامات:
    5,024
    فرم Firm
     
  3. بابر تنویر

    بابر تنویر -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 20, 2010
    پیغامات:
    7,319
    جزاک اللہ خیرا بھائ آزاد۔ شئرنگ کا شکریہ
     
  4. جاسم منیر

    جاسم منیر Web Master

    شمولیت:
    ‏ستمبر 17, 2009
    پیغامات:
    4,636
    جزاکم اللہ خیرا
    بہت مفید شئرنگ۔
    اللہ تعالٰی ہمیں عمل کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین۔
     
  5. مفتی عبداللہ

    مفتی عبداللہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏فروری 19, 2012
    پیغامات:
    28
    جزاک اللہ خیرا کثیرا بھایی
     

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں