والد صاحب

بابر تنویر نے 'ادبی مجلس' میں ‏مئی 1, 2012 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    شمولیت:
    ‏دسمبر 20, 2010
    پیغامات:
    7,316
    27 اپریل آکر گذر گئ۔ پورے 34 سال ہو گۓ۔ اتنا عرصہ گذرنے کے باوجود بھی مجھے یہ کل ہی کی بات لگتی ہے۔ یہ مارچ 1978 کا ذکر ہے۔ وہ کافی عرصہ سے بیمار تھے کراچی سے سیالکوٹ ہماری پھوپھی اور اپنی بہن شادی کے سلسلہ میں جارہے تھے۔ راستے میں میں نے ان سے کہا کہ جلدی واپس نہ آئیے گا چند دن آرام کیجیۓ گا۔ دکان میں سنبھال لوں گا۔ کہنے لگے ہاں یار اب سوچتا ہوں کہ کچھ آرام کر ہی لوں۔ دوستو آپ سمجھ گۓ ہوں گے کہ میں کن کی بات کر رہا ہوں۔ سب والدین اپنی اولاد سے محبت کرتے ہیں۔ ہمارے والد بھی ہم سے بہت محبت کرتے تھے۔ میں ان سے کچھ زیادہ ہی نزدیک تھا اور وہ اپنی ہر بات مجھ سے شئر کرتے تھے۔ اور ان کی مجھ سے محبت کا یہ عالم تھا کہ اگر وہ مجھ سے کبھی ناراض ہو جاتے یا کسی بات پر ڈانٹ دیتے تو خود بیمار پڑ جاتے تھے۔
    ہمارے بچپن کا ابتدائ حصہ کچھ خوشحالی میں گذرا۔ والد صاحب ایک ہوٹل میں مینیجر تھے۔ تنخواہ معقول تھی۔ یہ 1965 کے اوائل کا ذکر ہے کہ وہ ایک خوفناک حادثے کا شکار ہوۓ۔ میں وہ منظر آج تک نہیں بھول پایا ہوں کس طرح وہ کراچی کے جناح ہاسپٹل میں بیڈ پر پڑے تکلیف سے کراہ رہے تھے اور امی ساتھ بیٹھی رو رہی تھیں۔ اس حادثے کے بعد وہ کافی عرصہ تک کچھ کام کرنے کے قابل نہین ہو سکے تھے۔ اور پھر جب وہ چلنے پھرنے کے قابل ہو‎ۓ تو محلہ میں ہی ایک چھوٹی سی دکان کھول لی تاکہ گھر کا نظام چل سکے۔ خود دار آدمی تھے۔ ہمارے کچھ رشتہ دار جو کہ مالی لحاظ سے مستحکم تھے انہوں نے والد صاحب کو مالی مدد کی پیش کش کی کہ اس چھوٹی سی دکان کے بجاۓ کوئ اور بڑا کاروبار کرلیں مگر والد صاحب نے انکار کردیا کہ جو کچھ کروں گا اپنے ہی بل بوتے پر کروں گا۔
    بہر حال وقت گذرتا رہا۔ اس وقت ہم دو بھائ اور ایک بہن تھے۔ بعد میں اللہ تعالی نے ہمیں ایک بہن اور بھائ سے مزید نوازا۔ ہماری پڑھائ چلتی رہی اور اللہ کے فضل و کرم سے گھر کا نظام بھی والد صاحب کی انتھک محنت کی بدولت اچھے طور پر چلتا رہا۔ مگر اس دوران انہوں نے اپنی صحت کا خیال نہین رکھا۔ اور گھر میں بھی کسی کو بھی اپنی بیماری کا احساس نہین ہونے دیا۔ میٹرک کے بعد میرا معمول تھا کہ بازار سے سامان میں ہی لے کر آتا تھا اور پھر رات کو ایک گھنٹہ دکان پر بیٹھا کرتا تھا اور وہ گھر چلے جایا کرتے تھے۔
    غالبا جولائ 1977 کا ذکر ہے میں دکان پر بیٹھا ہوا تھا کہ جس ڈاکٹر سے وہ علاج کراتے تھے وہ دکان پر آگیا۔ اس نے پوچھا کہ والد صاحب کہاں ہیں میں نے کہا کہ گھر پر۔ کہنے لگا کہ عجیب آدمی ہیں۔ میں نے کل کہا تھا کہ آج آٹھ بجے کلینک پر ضرور آنا۔ پھر مجھ سے کہا کہ انہین کہہ دو کہ کل ضرور کلینک پر آئیں ورنہ میں خود گھر پر آ جاؤں گا۔ دوسرے دن وہ کلینک گۓ تو ڈاکٹر نے ان کا چیک اپ کیا تو معلوم ہوا کہ ان کی بیماری کافی بڑھ چکی ہے اور صرف ایک پھیپھڑا ہی کام کر رہا ہے۔ اس کے بعد ان کی بیماری بڑھتی رہی اور وہ دن بدن کمزور ہوتے گۓ۔ اپریل کے پہلے ہفتے میں وہ سیالکوٹ چلے گۓ۔ اور یہ ہماری ان سے آخری ملاقات تھی۔
    ان کی وفات سے ایک ہفتہ پہلے ان کا ایک خط میرے نام آیا۔ جس میں والد صاحب نے مجھے لکھا کہ میرے بعد اپنی امی اور دوسرے بہن بھائیوں کی دیکھ بھال تمہاری ذمہ داری ہے۔ اور پھر 27 اپریل 1978 کو وہ اس دنیا سے رخصت ہوگۓ۔ ہمیں ان کی وفات کے بارے میں تین دن کے بعد معلوم ہوا۔ وفات کے وقت صرف ہماری ایک بہن ہی ان کے ساتھ تھی۔
    34 سال گذر گۓ مگر مجھے تو وہ کل ہی کی بات معلوم ہوتی ہے۔ اللہ تعالی عزوجل کا لاکھ لاکھ شکر ہے کہ اس نے اتنی توفیق دی کہ میں اپنی ذمہ داری احسن طریقے سے نبھا سکوں اور الحمد للہ آج تک نبھا رہا ہوں۔ بھائیوں بہنوں وغیرہ کی شادی کی۔ الحمد للہ اب سب اپنے اپنے گھروں میں خوش ہیں ۔ امی الحمد للہ حیات ہیں۔ اور یہ ان کی دعاؤں ہی کا نتیجہ ہے کہ میں آج اس مقام پر کھڑا ہوں اور اللہ تعالی نے زندگی کے ہر موڑ پر میرے لیۓ آسانیاں پیدا کیں۔
    دوستو اس بار جب 27 اپریل آئ تو دل چاہا کہ یہ ذاتی باتین آپ کے ساتھ شئر کروں۔ آپ سب سے درخواست ہے کہ میرے والد صاحب کی مغفرت اور میری والد کی صحت و تندرستی کے لیۓ دعا کریں۔
     
    Last edited by a moderator: ‏مئی 1, 2012
    • پسندیدہ پسندیدہ x 3
  2. ابو ابراهيم

    ابو ابراهيم -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏مئی 11, 2009
    پیغامات:
    3,870
    اللہ آپ کے والد کی مغفرت کرے - آمین
    اللہ آپ کی والدہ کو صحت و تندرستی دے - آمین
     
  3. marhaba

    marhaba ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏فروری 5, 2010
    پیغامات:
    1,667
    اللہ آپ کے والد کی مغفرت کرے - آمین
    اللہ آپ کی والدہ کو صحت و تندرستی دے - آمین
     
  4. عبد الرحمن یحیی

    عبد الرحمن یحیی -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 25, 2011
    پیغامات:
    2,313
    بھائی
    اللہ اُن کی مغفرت فرمائے
    اُن کی اگلی منزلیں آسان فرمائے
    آمین
    واللہ آپ خوش قسمت ہیں کہ آپ کے والد جب اس فانی دنیا سے گئے ووہ آپ پر خوش تھے
    اب آپ جتنا ہو سکے اُن کے لیے دعا کیا کریں
    کہ میرے آقا کے ایک فرمان کا مفہوم ہے
    '' انسان جب دنیا سے چلا جاتا ہے اُس کے اعمال کا سلسلہ منقطع ہوجاتا ہے سوائے تین چیزوں کے
    اور اُن میں سے ایک چیز آقا علیہ الصلا ۃ والسلام نے یہ بتلائی کہ
    نیک اولاد جو اپنے والدین کے لیے دعا کرتی ہے اس کا اجر و ثواب انہیں مرنے کے بعد بھی ملتا ہے
    او کما قال صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم
     
  5. ام ثوبان

    ام ثوبان رحمہا اللہ

    شمولیت:
    ‏فروری 14, 2012
    پیغامات:
    6,691
    بھائی
    اللہ اُن کی مغفرت فرمائے
    اُن کی اگلی منزلیں آسان فرمائے
    آمین
    واللہ آپ خوش قسمت ہیں کہ آپ کے والد جب اس فانی دنیا سے گئے ووہ آپ پر خوش تھے
    اب آپ جتنا ہو سکے اُن کے لیے دعا کیا کریں
    کہ میرے آقا کے ایک فرمان کا مفہوم ہے
    '' انسان جب دنیا سے چلا جاتا ہے اُس کے اعمال کا سلسلہ منقطع ہوجاتا ہے سوائے تین چیزوں کے
    اور اُن میں سے ایک چیز آقا علیہ الصلا ۃ والسلام نے یہ بتلائی کہ
    نیک اولاد جو اپنے والدین کے لیے دعا کرتی ہے اس کا اجر و ثواب انہیں مرنے کے بعد بھی ملتا ہے
    جتنے اچھے آپ ھیں اپنے ماں کے لئے اپنے بہن بھائیوں کے لئے ایسے خوشقسمت لوگ بہت کم ہیں اللہ آپ کو اپنے ماں باپ کے لئے صدقہ جاریہ بناے آپ کی اولاد کو آپ کی آنکھوں کی ٹھنڈک اور صدقہ جاریہ بناے آمین
     
  6. ابن حسیم

    ابن حسیم ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏اکتوبر، 1, 2010
    پیغامات:
    891
    اللھم اغفرلہ وارحمہ وعافہ واعف عنہ۔ اللہ نور قبرہ واجعل قبرہ روضۃ من ریاض الجنۃ۔
     
  7. ام حمزہ

    ام حمزہ رکن اردو مجلس

    شمولیت:
    ‏جنوری 31, 2011
    پیغامات:
    207
    اللہ تعالی آپ کے والد کے درجات بلند کرے ۔ اپکی والدہ کو صحت وتندرستی دے اور انکا سایہ آپکے سر پر قائم رکھے ۔آمین !
     
  8. ساجد تاج

    ساجد تاج -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 24, 2008
    پیغامات:
    38,757
    اللہ آپ کے والد کی مغفرت کرے - آمین
    اللہ آپ کی والدہ کو صحت و تندرستی دے - آمین

    والدین کو ناراض کر کے زندگی گزارنا بھی کوئی زندگی ہے۔ ایک بار جو یہ چلیں تو پھر کہاں واپس آتے ہیں جب پاس ہوتے ہیں‌ تو سلام کرنا بھول جاتےہیں اور جب دور جاتے ہیں تو آنکھیں نم ہونے لگتی ہیں۔ ان شاءاللہ جلد ہی اس بارے میں‌ ایک تحریر لکھوں گا
     
  9. جاسم منیر

    جاسم منیر Web Master

    شمولیت:
    ‏ستمبر 17, 2009
    پیغامات:
    4,637
    بابر بھائی، اللہ تعالٰی آپ کے والد کی مغفرت فرمائے، اور آپ کی والدہ کو صحت عطا فرمائے۔ آمین۔
     
  10. نعیم یونس

    نعیم یونس -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 24, 2011
    پیغامات:
    7,922
    اللہ تعالی سے دعا ھے کہ اللہ تعالی آپ کے والد مرحوم کی مغفرت کرے اور آپ کی والدہ کو صحت کاملہ عطا فرمائے۔ آمین
     
  11. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,859
    السلام علیکم ۔
    اللہ عزوجل ان کی مغفرت فرمائے اور جنت الفردوس میں جگہ دے ۔ آمین ۔
    اللہ تعالی آپکی والدہ کو لمبی صحت وتندرستی عطا فرمائے اوران کا سایہ آپ پر تادیر قائم و دائم رکھے۔ آمین یا رب العالمین ۔
     
  12. وحیداحمدریاض

    وحیداحمدریاض -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏فروری 25, 2011
    پیغامات:
    1,105

    اللہ آپ کے والد کی مغفرت کرے - آمین
    اللہ آپ کی والدہ کو صحت و تندرستی دے -
    آمین
    آمین


    یا رب العٰلَمین​
     

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں