!!ملک سے محبت!! تحریر :‌ڈاکٹر شفیق الرحمن

ام ھود نے 'دیس پردیس' میں ‏دسمبر 21, 2007 کو نیا موضوع شروع کیا

موضوع کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے کھلا نہیں۔
  1. ام ھود

    ام ھود -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 17, 2007
    پیغامات:
    1,198
    [​IMG]
    جاری ہے
    اپنی آراء کا اظہار کریں تاکہ اگلا پارٹ‌بھی بھیج سکوں۔
    شکریہ
     
  2. کارتوس خان

    کارتوس خان محسن

    شمولیت:
    ‏جون 2, 2007
    پیغامات:
    933
    بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔۔۔وبعد!۔
    میں‌ اپنی رائے دینے سے پہلے بہتر یہ سمجھتا ہوں کہ اس تحریر کو پہلے مکمل کر لیا جائے تاکہ صحیح انداز میں اظہار رائے سب کے سامنے پیش کروں۔۔۔ اُمید ہے کہ آپ مزید تاخیر کرنے سے اجتناب برتیں گیں اور باقی کے صفحات جلد سے جلد اس بیل میں جڑ دیں‌گی۔۔۔

    والسلام۔۔۔‌
     
  3. ام ھود

    ام ھود -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 17, 2007
    پیغامات:
    1,198
    وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ
    جزاک اللہ خیر
    ان شاء اللہ میں ابھی باقی حصہ میں مکمل کرتی ہوں۔
    والسلام
     
  4. ام ھود

    ام ھود -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 17, 2007
    پیغامات:
    1,198
    [​IMG]

    [​IMG]

    [​IMG]
     
  5. ام ھود

    ام ھود -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 17, 2007
    پیغامات:
    1,198
    یہ میں نے پوری تحریر آپ کے سامنے پیش کر دی۔اب اپنی آرا کا اظہار ضرور کریں
    والسلام
     
  6. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,399
    جزاک اللہ خیر بنت الاسلام بہن!

    بہت عمدہ تحریر پیش کی آپ نے، یقیناً اسلام میں فلسفہء وطن یا وطن پرستی کی قطعی گنجائش نہیں اور اس فتنے کو ہجرت کے ذریعے بخوبی کچل کر دکھایا گیا، جب سے ملت اسلامیہ خود ساختہ سرحدوں میں تقسیم ہوئی اسی دن سے اس کا زوال شروع ہوا۔ علامہ محمد اقبال نے بھی شاید اسی جذبے کے تحت کہا تھا

    ان تازہ خداؤں میں بڑا سب سے وطن ہے
    جو پیرہن اس کا ہے ، وہ مذہب کا کفن ہے

    یہ بت کہ تراشیدۂ تہذیب نوی ہے
    غارت گر کاشانۂ دین نبوی ہے

    بازو ترا توحید کی قوت سے قوی ہے
    اسلام ترا دیس ہے ، تو مصطفوی ہے

    نظارۂ دیرینہ زمانے کو دکھا دے
    اے مصطفوی خاک میں اس بت کو ملا دے ‫!

    ہے ترک وطن سنت محبوب الہی
    دے تو بھی نبوت کی صداقت پہ گواہی

    گفتار سیاست میں وطن اور ہی کچھ ہے
    ارشاد نبوت میں وطن اور ہی کچھ ہے

    اقوام میں مخلوق خدا بٹتی ہے اس سے
    قومیت اسلام کے جڑ کٹتی ہے اس سے
     
  7. ام ھود

    ام ھود -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 17, 2007
    پیغامات:
    1,198
    شکریہ رفی بھائی۔آپ نے اپنے اشعار سے تو سونے پر سہاگہ کر دیا۔۔۔ماشاءللہ بہت ہی زبردست اشعار ہیں محمد اقبال کے۔
     
  8. ہیر

    ہیر -: Banned :-

    شمولیت:
    ‏اگست 20, 2007
    پیغامات:
    432
    السلام علیکم!۔
    میں یہ جاننا چاہتی ہوں کہ حضرت ابراہیم علیہ السلام رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے دادا تھے یا باپ؟۔
    خوش رہیئے۔
     
  9. اعجاز علی شاہ

    اعجاز علی شاہ -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 10, 2007
    پیغامات:
    10,324
    وعلیکم السلام
    محترمہ اگر آپ قرآن میں دیکھیں تو آپ کو اس کی دلیل مل سکتی ہے۔ اللہ تعالی کا قول ہے:

    (وجاھدوا فی اللہ حق جھادہ ھو اجتبکم وماجعل علیکم فی الدین من حرج ملۃ ابیکم ابراھیم ۔۔۔۔۔۔الی آخرہ) سورۃ الحج آیت 78
    (اور اللہ کی راہ میں ویسا ہی جہاد کرو جیسے جہاد کاحق ہے۔ اسی نے تمہیں برگزیدہ بنایاہے اور تم پر دین کے بارے میں کوئی تنگی نہیں ڈالی ۔ دین تمہارے باپ ابراھیم کا قائم رکھو۔۔۔۔الی آخرہ)

    مذکورہ آیت سے پتہ چلا کہ حضرت ابراھیم علیہ السلام امت محمدیہ کے باپ ہیں۔ دوسری بات یہ ہے کہ عرب ہونے کے ناطے حضرت ابراھیم علیہ السلام نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے باپ تھے

    مذکورہ بالا ترجمہ اور تفسیر کا خلاصہ تفسیر احسن البیان سے لیا گیا ہے۔
     
  10. باذوق

    باذوق -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏جون 10, 2007
    پیغامات:
    5,623
    السلام علیکم
    جزاک اللہ خیر سسٹر بنت الاسلام !
    بہت مفید تحریر آپ نے شئر کی ہے۔ شکریہ
    اسی سے ملتے جلتے موضوع پر ماضی میں ، مَیں بھی بہت لکھتا رہا ہوں۔
    ذیل کا ایک تھریڈ ملاحظہ فرمائیں :
    یومِ آزادی ۔۔۔ اغیار کی مشابہت
     
  11. ام ھود

    ام ھود -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 17, 2007
    پیغامات:
    1,198
    ماشاءاللہ

    ما شاء اللہ ۔۔آپ کی تحریریں تو بہت خوب ہیں۔ہمیں اس دور میں اس موضوع پر اسلامی تحریروں کی بہت ضرورت ہے کیونکہ کافر ممالک ہمارے ذہنوں میں اپنے افکار بری طرح راسخ کر رہے ہیں اللہ ہمیں ان کے فتنوں سے محفوظ رکھے آمین۔سوری یہ میری تحریر نہیں ہے بلکہ ڈاکٹر شفیق الرحمٰن زیدی حفظہ اللہ کی تحریر ہے۔اللہ ان کی زندگی میں برکت فرمائے اور ان کے علم و عمل میں اضافہ فرمائے۔آمین یا رب العالمین۔
    جزاک اللہ خیر
     
  12. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,903
    جزاک اللہ خیر،بہت مفید تحریر پیش کی -شکریہ
    امید کرتا ہوں کہ آپ اسی طرح تحریریں پیش کرتی رہیں گی-
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  13. منہج سلف

    منہج سلف --- V . I . P ---

    شمولیت:
    ‏اگست 9, 2007
    پیغامات:
    5,047
    السلام علیکم بنت الاسلام!
    بہت ہی اچھی تحریر پیش کی ہے آپ نے۔
    اللہ آپ کو اس کا اجر عظیم عطا فرمائے۔ آمین
    بے شک وطن پرستی ایک طاغوت ہے جو ہم مسلمانوں میں کوٹ کوٹ کر بھری ہوئی ہے۔
    ہم نے ایک غیر اسلامی شخص کو قائد اعظم کا لقب دیا ہے حالانکہ قائد اعظم صرف ایک محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہے اور قیامت تک رہے گا۔
    ہم نے جب سے طاغوتوں کی اتباع کرنی شروع کردی ہے تب سے ہم تباہ و برباد ہوئے ہیں اور وہ بھی انہی طاغوتوں کے ہاتھوں۔
    پاکستان کی وہ تاریخ پڑھیں جو اصل ہے تو آپ کو پتہ چلے گا کہ پاکستان بننا ہی ایک سازش تھی جو ان گوروں نے بنائی تھی، ان کو بریصغیر میں ایک ان کی کٹھ پتلی ریاست چاہیے تھی، کیونکہ ان کو بریصغیر چھوڑنا ہی تھا مگر وہ اس طرح چھوڑنا چاہتے تھے کہ جس طرح ساری زندگی وہ اس کے ہاتھ میں رہے اور جس کے ذریعے وہ اپنے عظائم بریصغیر میں قائم رکھ سکیں۔
    گاندھی اور جناح ان کے دو مہرے تھے، جن کے ذریعے وہ دو قومی نظریعے کو پایہ تکمیل پہنچاسکیں۔
    ھندوستان پہ مسلمانوں نے ایک ہزار سال حکومت کی اگر وہ پورا ھندوستان دے دیتے تو دنیا میں وہ ایک اور طاقت بن کے نمودار ہوتی جو ان کے لیے باعث عذاب تھی۔
    ھندوستانی تحریک میں یہ کبھی بھی شامل نہیں تھا کہ دو الگ ریاستیں ہوں مگر جناح اور گاندھی کے ذریعے دو ریاستیں بنادی گئيں۔
    چلیں دو ریاستیں ہی سہی مگر اس دو قومی نظریعے کی ایک شرط یہ بھی تھی کہ جس آبادی میں مسلمان زیادہ ہیں وہ پاکستان میں ہوگی۔
    مگر جب پاکستان بنا تو کچھ ریاستوں کو اگنور کیا گیا جس کا نتیجہ آج ہم سب کے سامنے ہے۔
    کشمیر، احمد آباد، گجرات۔
    ان لوگوں نے اسلامی کے لیے بہت سے قربانیاں دی مگر ان کو دشمنوں کے منہ میں رہنے دیا گیا جس کی وجہ سے وہ آج تک غدار ٹہرے ہیں اور آج تک ہزاروں کی تعداد میں ان کا خون بہ رہا ہے۔
    اس کا ذمہ دار جناح ہے بس۔
    لوگوں کو دھوکا دیا گیا، بہت بڑا دھوکا اسلام کے نام پر، دین کے نام پر، محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے نام پر۔
    کلمۃ اللہ کے نام پر، توحید کے نام پر، اللہ کی ذات کے نام پر ایک مملکت اسلامیہ بنائے دینے کا وعدہ ہوا تھا مگر پاکستان کے نام پر کفرستان بناکے دیا گیا، میں پوچھتا ہوں آخر کیوں کیا گیا اتنا بڑا دھوکا۔۔۔۔۔۔؟
    جناح نے دھوکا کیا، گوروں کے ساتھ مل کر۔
    قربانی دی اہل اسلام نے، پھانسیاں کھائیں علماؤں نے، کالے پانی کی سزا ملی اہل توحید کو اور قائد اعظم بنا جناح۔۔۔۔۔۔۔۔
    جس نے ایک بھی دن جیل میں نہیں گذاری، جس کے کپڑے کی کریز تک اس جدوجہد میں خراب نہیں ہوئی وہ بنا ملک کا بے تاج بادشاہ۔
    کلمہ رہ گیا پارلیمینٹ کی دیوار پر اور شیطانی قانون لوگوں کے اوپر حکومت کرنے لگا۔
    اب ہم کیا کرسکتے ہیں جو ہونا تھا وہ تو ہوگيا۔
    اسلام تو نافذ ہی نہیں ہوا اس ملک میں تو نہ ہی ملے نافذ کرسکتے ہیں۔
    مودودی کا فلسفہ قطبی "اخوان المسلمین" فلسفہ ہے اور وہ اسلام کی عکاسی نہیں کرتا اور القاعدہ جیسے گروپ منظر عام آتے ہیں اور اسلام کا ہی نقصان ہوتا ہے۔
    مودودی کی جماعت" جماعت اسلامی" خود اس کفریہ قانون کا حصہ ہے تو ہم پھر کس پہ اعتبار کریں۔
    بہنا! آپ کی تحریر اچھی ہے اور دل کو لگی، اچھا لگا کوئی تو ہے جو اس کفریہ قانون کے خلاف آواز بلند کرسکتا ہے۔
    آواز بلند کرنی چاہےی مگر لال مسجد تحریک کی طرح نہیں اس سے الٹا اسلام کی بدنامی ہوتی ہے بلکہ لوگوں کے ذہن سے بدعت اور شرک اور جاہلیہ رسم و رواج کو نکال دو اور توحید بھردو، لوگ خود اس نظام کو ختم کردیں گے۔ ان شاءاللہ
    اس کفریہ جمہوری الیکشن میں اہل حدیث جماعت بھی حصہ لیتی ہے جس کی میں بذات خود مذمت کرتا ہوں اور کرتا رہوں گا۔ انشاءاللہ
    میں کہتا ہوں کہ جب یہ اہل حدیث حضرات سینیٹ يا پارلیمینٹ میں آتے ہیں تو کون سا حلف اٹھاتے ہیں۔۔۔۔؟
    اللہ کے ساتھ وفاداری اور اللہ کا قانون نافظ کرنے کا يا 73 کا کفریہ قانون کی تعبیداری کرنے کا۔۔۔۔؟
    اللہ کے قانون کی بات تو ہر کوئی کرتا ہے مگر عملی بات آتی ہے تو پتہ چلتا ہے۔
    والسلام علیکم
     
  14. ام ھود

    ام ھود -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 17, 2007
    پیغامات:
    1,198
    جزاک اللہ‌خیر

    بہت خوب واقعی محمد علی جناح اس قابل نہیں کہ اسے قائد کہا جائے لیکن ہم مسلمان حتی کہ اہل حدیث بھی اسے یہ لقب دیتے ہیں اور آج کل انکی بہت تعریفیں ہو رہی ہیں۔۔۔اور ایسا کرنا مسلمانوں کی شان میں نہیں ۔
    والسلام
     
  15. اعجاز علی شاہ

    اعجاز علی شاہ -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 10, 2007
    پیغامات:
    10,324
    برادر عتیق الرحمن الحمد للہ تمام اہل حدیث اس کفریہ یعنی جمہوری نظام کے حق میں نہیں اور شاید ہی کوئی ایسا ہو جس نے جمہوریت کے حق میں کوئی کتاب لکھی ہو (اگر بالفرض لکھی بھی ہو تو ہم اس کے مقلد نہیں) اگر کچھ اہل حدیث جمہوری نظام سے متاثر ہیں تو شاید وہ ذاتی مفاد کیلئے ایسا کرتے ہو کیوں کہ کرسی کا نشہ سب کو آتا ہے۔ اس لئے ہمیں اس کی فکر نہیں کرنی چاھیے۔
    اسلام میں خلافت ہے ناکہ جمہوریت۔ جمہوریت نے ملک کو ٹکڑے ٹکڑے کردیا اور آج سیاسی قتل عام کی وجہ سے تمام الزامات مذہب پر لگائے جاتے ہیں۔
     
  16. ام ھود

    ام ھود -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 17, 2007
    پیغامات:
    1,198
    جزاک اللہ خیر Slave of Allah بھائی۔۔جی واقعی یہ بہت افسوس ناک بات ہے کہ کچھ اہل حدیث‌ بھی جمہوریت کے چکروں میں پڑے ہوئے ہیں لیکن اہل حق ان پر ہمیشہ رد کرتے آئے ہیں جیسے کہ اس موضوع پر ڈاکٹر سید شفیق الرحمن نے کتاب “جمہوریت دین ابلیس“ لکھ کر اس موضوع کا حق ادا کیا ہے۔اللہ انہیں ہم سب کی طرف سے جزائے خیر دے آمین
     
  17. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,399
    و علیکم السلام!

    بے شک قائدِ اعظم صرف اور صرف محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہی ہیں جو قرآنِ کریم کی عملی تفسیر ہیں، جن کی ذات کا ہر پہلو قابلِ تقلید ہے۔ ان کے علاوہ کوئی کسی خاص شعبے میں قائد تو کہلا سکتا ہے مگر قائدِ اعظم ہر گز نہیں!
    اگر کسی کو کوئی شک ہو تو بی بی سی کے اس لنک پر قائد محمد علی جناح کے حالاتِ زندگی پر ایک نظر ڈال سکتا ہے جو ان کے ڈرائیور سید عبد الحئی نے اپنے ایک انٹرویو کے دوران بتائے، اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ قائدِ محترم اسلام کے ہر پہلو پر ہمارے رول ماڈل نہیں ہو سکتے۔

    والسلام
     
  18. اعجاز علی شاہ

    اعجاز علی شاہ -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 10, 2007
    پیغامات:
    10,324
    قائد اعظم کو قائد پاکستان کہنا زیادہ مناسب ہوگا۔ کیوں کہ وہ تو صرف پاکستانی قوم کے قائد تھے نا کہ عالم اسلام کے۔۔
     
  19. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,903
    السلام علیکم !
    بھائی سلیو سب اہل حدیث جمہوریت کے اس یہودی و نصرانی جال میں نہیں ، ہاں کچھ ایسے ہیں جن کو اقتدار کہ ہوس ہے - اس لیے سب کو شامل کرنا صحیح نہیں ہو گا- اہل حدیثوں میں بھی فرقے بن چکے اس لیے کوئی بھی جو اپنے آپ کو اہل حدیث کہے یا محمدی یا کچھ اور، اگر اس کا فعل اس کے قول کے متضاد ہے تو اس کی پرزور مزمت کی جانی ضروری ہے . ہر عالم یا مسلمان جو اپنے آپ کو اہل حدیث کہتا ہے اس پر واجب ہے کے اسلام کے مفاد کو ذاتی مفاد پر ترجیح دے.
     
  20. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,399
    فرد قائم ربطِ ملت سے ہے تنہا کچھ نہیں
    موج ہے دریا میں اور بیرونِ دریا کچھ نہیں

    ہماری ملت، ملتِ اسلامیہ ہے اس لیے جناب لیاقت علی خان کے لیے بولا جانے والا خطاب قائدِ ملت بھی صحیح نہیں ہے۔
     
Loading...
موضوع کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے کھلا نہیں۔

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں