عام کے صیغے

رفی نے 'تسہیل الوصول إلى فہم علم الاصول' میں ‏مئی 8, 2013 کو نیا موضوع شروع کیا

موضوع کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے کھلا نہیں۔
  1. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,399
    عام کے صیغے


    عام پر دلالت کرنے والے چند الفاظ ہیں جن کو عموم کے صیغ کے نام سے جانا جاتا ہے۔ ان میں چند حسبِ ذیل ہیں:

    1۔ کل۔ جیسا کہ اللہ رب العالمین کا فرمان ہے: ” ﴿ كُلُّ نَفْسٍ ذَائِقَةُ الْمَوْتِ ﴾ [الأنبياء:35] “ ہر جان موت کو چکھنے والی ہے۔ اسی طرح اللہ سبحانہ وتعالیٰ کا یہ فرمان: ” ﴿ كُلٌّ آمَنَ بِاللَّهِ وَمَلائِكَتِهِ ﴾ [البقرة:285] “ (رسولوں اور مؤمنوں میں سے )ہر ایک اللہ تعالیٰ اور اس کے فرشتوں پر ایمان لایا ہے۔

    2۔ جمیع۔ جیسا کہ : ” جاء القوم جميعهم “ ساری کی ساری قوم آئی۔

    3۔ جمع کا وہ صیغہ جو معرف باللام ہو لیکن عہد(ذہنی یاخارجی)کےلیےنہ ہو۔ جیسا کہ: ” ﴿ قَدْ أَفْلَحَ الْمُؤْمِنُونَ ﴾ [المؤمنون:1] “ یقیناً مؤمن کامیاب ہوگئے۔

    اسی طرح جمع کا وہ صیغہ جو اضافت کی وجہ سے معرفہ بن جائے۔ جیسا کہ : ” ﴿ يوصِيكُمُ اللَّهُ فِي أَوْلادِكُمْ ﴾ [النساء:11] “ اللہ رب العزت تمہیں تمہاری اولاد کے بارے میں حکم دیتے ہیں۔

    4۔ وہ مفرد لفظ جو معرف باللام ہو لیکن عہد(ذہنی یا خارجی) کےلیے نہ ہو۔ جیسا کہ: ” ﴿ وَالْعَصْرِ (1) إنَّ الإنسَانَ لَفِي خُسْرٍ (2) إلاَّ الَّذِينَ آمَنُوا وَعَمِلُوا الصَّالِحَاتِ وَتَوَاصَوْا بِالْحَقِّ وَتَوَاصَوْا بِالصَّبْرِ ﴾ [العصر:1ـ3] “زمانے کی قسم(1)بیشک (بالیقین) انسان سرتا سر نقصان میں ہے(2)سوائے ان لوگوں کے جو ایمان ﻻئے اور نیک عمل کیے اور (جنہوں نے) آپس میں حق کی وصیت کی اور ایک دوسرے کو صبر کی نصیحت کی (3)

    اسی طرح وہ مفرد لفظ جو اضافت کی وجہ سے معرفہ بن گیا ہو۔ جیسا کہ: ” ﴿ وَإن تَعُدُّوا نِعْمَةَ اللَّهِ لا تُحْصُوهَا ﴾ [النحل:18] “ اگرتم اللہ تعالیٰ کی نعمتوں کو گننا چاہو تو انہیں شمار نہیں کرسکو گے۔

    تثنیہ کا وہ صیغہ جو معرف باللام ہو۔ جیسا کہ رسول اللہﷺ نے ارشاد فرمایا: ” «إذا التقى المسلمان بسيفيهما...» “ جب دو مسلمان تلواریں لے کر ملاقات کریں۔۔۔الخ
    تو یہاں پر ” المسلمان “ تمام مسلمانوں کو شامل ہے۔

    ’ما‘۔ یہ غیر عاقل کےلیے استعمال ہوتا ہے۔ بطور موصولہ اس کی مثال اللہ تعالیٰ کا یہ فرمان ہے: ” ﴿ مَا عِندَكُمْ ينفَدُ وَمَا عِندَ اللَّهِ بَاقٍ ﴾ [النحل:96] “ جو کچھ تمہارے پاس موجود ہے ، وہ ختم ہونے والا ہے اور جو اللہ کے پاس ہے وہی باقی رہنے والا ہے۔

    بطور شرطیہ اس کی مثال اللہ رب العالمین کا یہ فرمان ہے: ” ﴿ وَمَا تَفْعَلُوا مِنْ خَيرٍ يعْلَمْهُ اللَّهُ ﴾ [البقرة:197] “ تم جو بھی بھلائی کا کام کروگے،اللہ سبحانہ وتعالیٰ اسے جان لیں گے۔

    ’من‘۔ یہ عاقل کےلیے استعمال ہوتا ہے۔ موصولہ کے طور پر اس کی مثال یہ فرمان الہٰی ہے: ” ﴿ وَلا تُؤْمِنُوا إلاَّ لِمَن تَبِعَ دِينَكُمْ ﴾ [آل عمران:73] “ تم صرف اسی کی بات مانو جو تمہارے دین کی پیروی کرتا ہے۔

    بطور شرطیہ اس کی مثال اللہ رب العزت کا یہ فرمان ہے: ” ﴿ فَمَن يعْمَلْ مِثْقَالَ ذَرَّةٍ خَيرًا يرَهُ ﴾ [الزلزلة:7] “ تو جو کوئی ذرہ برابر بھی نیکی کرے گا ، اسے دیکھ لے گا۔

    8۔ مَتٰی۔ مبہم زمانہ کےلیے استعمال ہوتا ہے۔ بطور شرطیہ اس کی مثال: ” «متى زرتني أكرمك» “ جب بھی آپ مجھے ملنے آئیں گے ، میں آپ کی عزت وتوقیر کروں گا۔

    9۔ اَیْنَ۔ مبہم جگہ کےلیے استعمال ہوتا ہے۔ بطور شرطیہ اس کی مثال یہ ارشاد باری تعالیٰ ہے: ” ﴿ أَينَمَا تَكُونُوا يدْرِككُّمُ الْمَوْتُ ﴾ [النساء:78] “ تم جہاں بھی ہوں گے ، موت تمہیں تلاش پالے گی۔

    10۔ نفی کے سیاق میں نکرہ۔ یہ عموم میں نص اور ظاہر ہوتا ہے۔
     
Loading...
موضوع کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے کھلا نہیں۔

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں