بسم اللہ ایک شعارِاسلام

اجمل نے 'سیرتُ النبی محمد صلی اللہ علیہ وسلم' میں ‏دسمبر 27, 2016 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. اجمل

    اجمل محسن

    شمولیت:
    ‏فروری 10, 2014
    پیغامات:
    709
    یہ طائف ہے۔
    یہاں کے شرفاء نے نہایت بے رخی و بد اخلاقی کا ثبوت دیا‘ نہ صرف نازیبا سلوک کیا بلکہ یہاں کے اوباشوں تشدد پر اکسایا اور ان اوباشوں نے شقاوتِ قلبی کی انتہا کر دی ہے۔

    صادق و امین رحت اللعالمین ﷺ پر اتنے پتھر برسائے کہ آپؐ کے نعلین مبارک خون سے لت پت ہوگئیں، درد کی شدت سے آپؐ بیٹھ جاتے تو آپؐ کو کھڑا کر دیتے اور پھر پتھر برسائے جاتے۔ یہ ظلم کی انتہا تھی جس کا آج کے دور میں تصور محال بھی ہے۔ آج جو دنیا مہذب ہویٴ ہے تو ان ہی ظلمتوں میں جسم مبارک پہ پتھروں کے بارش سے لہو لہان ہونے کے باوجود صبر اور دعا کی برکت سے ہی ہوی ہے۔
    زخموں سے چُور اور مجبور ہوکر آپؐ نے ایک باغ میں پناہ لی جو عتبہ اور شیبہ کی ملکیت ہے۔
    نبی ﷺ انگور کی ایک بیل کی طرف بڑھتے ہیں اور اس کے سائے میں بیٹھ جاتے ہیں۔

    طائف کے اوباش جا چکے ہیں۔
    عتبہ اور شیبہ بھی باغ میں موجود ہیں۔
    عتبہ اور شیبہ نے آپ ﷺ کو اس حالت میں دیکھا تو اُن کے اندر کی قبائلی حمیت جاگ اُٹھی‘ انہیں ترس آگیا۔
    انہوں نے عداس نامی اپنے ایک نصرانی غلاسے کہا انگور کے چند خوشے اس آدمی کو کھانے کو دے دو۔

    عداس انگور کی پلیٹ رسول اللہ ﷺ کو پیش کیا اور بولا: ’’ کھائیے۔‘‘
    آپ ﷺ نے ’’ بسم اللہ ‘‘ پڑھ کر اپنا ہاتھ بڑھایا اور کھانا شروع کردیا ۔
    ’’ بسم اﷲ‘‘ پر عداس کے تعجب کی کوئی حد نہ رہی‘ اس نے حیرت سے آپؐ کی طرف دیکھا اور عرض کیا:
    ’’ اس علاقے کے لوگ تو یہ کلمات نہیں کہتے۔‘‘
    آنحضورﷺ نے پوچھا: ’’ عداس ! تم کہاں کے رہنے والے ہواور تمہارا دین کیا ہے ۔‘‘
    اس نےجواب دیا: ’’ میں نصرانی ہوں اور نینویٰ کاباشندہ ہوں ۔‘‘
    رسول اللہؐ استفسار کیا:
    ’’ مرد صالح یونس بن متیٰ کی بستی سے ؟ ‘‘​
    ’’ آپ کو کیا معلوم کہ یونس بن متیٰ کون ہیں ؟ ‘‘ عداس کی حیرانی اور بڑھ گئی۔
    رسول اللہؐ نے بتایا:
    ’’ وہ میرے بھایٴ ہیں۔ وہ نبی تھے اور میں بھی نبی ہوں۔‘‘​
    عداس نے نبوت کے یہ آثار وصفات دیکھ کر آپ کے سر اور ہاتھ پاوٴں کا بوسہ دیا اور کہہ اُٹھے:
    أَشْهَدُ أَنَّكَ عَبْدَ اللهِ وَرَسُوْلُهُ۔ ’’ میں گواہی دیتا ہوں کہ بیشک آپ اللہ کے بندے اور اس کے رسول ہیں‘‘

    واپس اپنے مالکان کی خدمت میں پہنچا تو اُنہوں نے اسے ڈانٹا لیکن غلامِ بے نوا کے لبوں پر یہ الفاظ مچل اُٹھے :
    ما فی الأرض خير من هذا۔ ’’روئے زمین پرآج ان سے بہتر کوئی نہیں۔‘‘
    جی حضرت عداس رضی اللہ تعالیٰ نے بالکل سچ کہا:
    جنہیں اللہ سبحانہ و تعالیٰ نے برگزیدہ بنا کر اپنی رسالت کے لیے چن لیا ہو ان سے بہتر کون ہو سکتا ہے۔ اور تاریخ نے یہ ثابت کر دیا۔
    رحمت عالم ﷺ پہ ہم سب فدا ہوں !
    آپ ﷺ کی زبانِ مبارک سے جہراً نکلا ہوا ’’ بسم اﷲ‘‘ نے ایک عیسایٴ کو مسلمان بنا دیا۔

    آج ہم اس شعائر اسلام پہ کتنا عمل پیرا ہیں۔ ہم میں سے کتنے ہیں جو جہراً ’’ بسم اﷲ‘‘ کہتے ہیں۔
    کتنے ہیں جو کسی غیر مسلم کے محفل میں بیٹھ کر کھاتے پیتے ہوئے یا کسی غیر مسلم سے کویٴ لین دین کرتے ہوئے با آواز بلند ’’ بسم اﷲ‘‘ کہتے ہیں۔ ہمارے دلوں میں داعیٴ اعظم ﷺ والی داعیانہ تڑپ کیوں پیدا نہیں ہوتی کہ ہمارے قول و فعل سے کویٴ جہنم میں جانے سے بچ جائے۔
    بلند آواز سے ’’ بسم اﷲ‘‘ کہنے میں ایک یہ بھی فائدہ ہے کہ ہم میں سے جو لوگ ’’ بسم اﷲ ‘‘ کہنا بھول جاتیں ہیں وہ بھی کہہ پائیں گیں۔
    ایک دور تھا جب مسلمان دستر خوان پر بیٹھ کر کھانا شروع کیجئیے یا تناول فرمائیے کہنے کے بجائیے ’’ بسم اﷲ ‘‘ کیجئیے کہتے تھے لیکن آج کے جدید دور میں اب یہ کہنا بھی معیوب سمجھا جاتا ہے۔
    اسی طرح مسلمانوں میں کویٴ بھی کام مل جل کر شروع کرنے سے پہلے ’ شروع کیجئے ‘ کہنے کے بجائے ’’ بسم اﷲ ‘‘ کیجئے ہی کہنے کا رواج تھا لیکن آج یہ بھی نا پید ہے۔
    لیکن آج ہم صرف قرآن کی تلاوت کرتے وقت‘ درس و تدریس میں یا پھر کویٴ اسلامی تقریر کرتے وقت ہی جہراً ’’ بسم اللہ ‘‘ کہتے ہیں۔
    ’’ بسم اﷲ‘‘ کی فضیلت و برکت کے بارے ہم میں کویٴ بھی انکاری نہیں لیکن ہم عملی طور پہ اس شعائر اسلام سے دن بدن دور ہوتے جارہے ہیں۔
    تو آئیے اپنے پیارے نبی صلی اللہ علیہ و سلم کی اس سنت کو زندہ کریں جیسا کہ آپ صلی اللہ علیہ و سلم نے ہمیں سبق سکھایا ہے:
    ’’اغلق بابک واذکر اسم اللہ واطفي مصباحک واذکراسم اللہ و خمراناءک واذکراسم اللہ واوک سقاءک واذکراسم اللہ ‘‘ (تفسیر القرطبی)
    ترجمہ : دروازہ بند کروں تو اللہ کا نام لیا کرو۔ دیا بجھاو تو اللہ کا نام لیا کرو۔ اپنے برتن ڈھانپو تو اللہ کا نام لیا کرو۔ اپنی مشک کا منہ باندھو تو اللہ کا نام لیا کرو۔

    مقصد یہ ہے کہ ہر کام چھوٹا ہو یا بڑا کرتے وقت انسان اپنے کار ساز حقیقی کا نام لینے کا خوگر ہو جائے تاکہ اس کی برکت سے مشکلیں آسان ہوں ۔ اس کی تائید و نصرت پر اس کا توکل پختہ ہوجائے۔ نیز جب اسے ہر کام شروع کرتے وقت اللہ کا نام لینے کی عادت ہو جائے گی تو وہ ہر ایسا کام کرنے سے رک جائے گا جس میں اس کے رب تعالی کی ناراضگی ہو ۔

    اے اللہ سبحانہ و تعالیٰ اپنی خاص رحمت سے ہمیں‘ ہمارے بچوں اور آئندہ نسلوں کو اپنے پیارے رسول ﷺکی سنتوں پر پورا پورا عمل کرنے والا بنا دے۔ آمین یا رب العالین.

    اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلٰی مُحَمَّدٍ وَّ عَلٰٓی اٰلِمُحَمَّدٍ کَمَا صَلَّیْتَ عَلٰٓی اِبْرَاھِیْمَ وَعَلٰٓی اٰلِ اِبْرَاھِیْمَ اِنَّکَ حَمِیْدٌ مَّجِیْدٌ
    اَللّٰھُمَّ بَارِکْ عَلٰی مُحَمَّدٍ وَّعَلٰٓی اٰلِ مُحَمَّدٍ کَمَا بَارَکْتَ عَلٰٓی اِبْرَاھِیْمَ وَعَلٰٓی اٰلِ اِبْرَاھِیْمَ اِنَّکَ حَمِیْدٌ مَّجِیْدٌ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
  2. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,954
    جزاک اللہ خیرا، بسم اللہ کلمہ کے اندر موجود اللہ تعالی کی وحدانیت کے معنی و مفہوم نے نصرانی عداس کو مسلمان کردیا تھا ۔ مسلمان اتنی گہرائی میں سوچیں تو بسم اللہ کبھی نا بھولیں ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  3. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,395
    جزاک اللہ خیرا
     
  4. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,484
    طائف کا پتھروں اور عداس والا قصہ مستند نہیں ہے۔
    شیخ البانی رحمہ اللہ نے دفاع عن الحدیث والسیرۃ میں اس بارے لکھا ہے۔ یہاں دیکھیے
    https://archive.org/stream/FP20098/20098#page/n17/mode/2up
     
    • متفق متفق x 1
  5. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,954
    اِفادہ عام کی خاطر عربی کا ،اردو میں ترجمہ کردیں ۔
     
  6. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,484
  7. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,954
    اچھا اہل حدیث تو شہید ہوچکے ہیں ۔ یہ تحقیق انہوں نے کہاں سے پوسٹ کی ۔ کوئی حوالہ نہیں دیا ۔ معلوم کرکریں اضافہ کردیں ۔
     
  8. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,484
    اللہ سلامت رکھے انہیں، بھلے ناراض رہیں۔ وہاں سلسلہ ضعیفہ از البانی کا حوالہ دیا ہے ۔ یہاں شیخ البانی کی ایک دوسری کتاب کا حوالہ آ گیا ہے۔
     
  9. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,954
    وہ ناراض ہیں. میرے علم میں نہیں. اللہ خیر کرے. حقیقی شہادت نہیں، بلکہ صم بکم کی شہادت انہیں نصیب ہوئی تھی .جو کسی اعزاز سے کم نہیں. اس لیے یاد کیا جارہا ہے.بہت ہی مخلص بندے تھے. یہ بھی سنا ہے مجلس ان سے بہت خوش تھی. صف اول کے مجاہدین میں سے تھے. اگرچہ نتیجہ آنے پر سب سے پیچھے رہے..خیر،
    میرا خیال ہے کہ دونوں واقعات مختلف ہیں. مزید تحقیق کی ضرورت ہے . واللہ اعلم
     
  10. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,484
    تحقیق کر کے ہی لکھا تھا کہ یہ مستند نہیں۔
     
    Last edited by a moderator: ‏دسمبر 29, 2016
    • معلوماتی معلوماتی x 1
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں