برما ميں انسانيت سوز مظالم – امريکی ردعمل

Fawad نے 'خبریں' میں ‏ستمبر 22, 2017 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. Fawad

    Fawad -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 19, 2007
    پیغامات:
    954
    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    برما ميں انسانيت سوز مظالم – امريکی ردعمل

    "روہنگيا باشندوں کو اس کڑے وقت ميں اميد اور مدد فراہم کريں"

    "پرتشدد مناظر اور اس کے متاثرين نے امريکی عوام کے ساتھ ساتھ دنيا بھر ميں مہذب لوگوں کو ہلا کر رکھ ديا ہے"۔

    ٹرمپ انتظاميہ کی جانب سے نائب صدر مائيک پينس نے بدھ کے روز اقوام متحدہ کی سيکورٹی کونسل کو ميانمار ميں انسانی سانحے پر اقدامات اٹھانے کے ليے زور ديا۔

    http://www.trt.net.tr/urdu/dny/2017...-hyn-my-ykh-pyns-811195#.WcNvEgcMFKc.facebook


    اکتوبر2016 سے اب تک امريکی حکومت نے پورے خطے ميں ايسی غير محفوظ آباديوں کو انسانی ہمدردی کی مد ميں تريسٹھ ملين ڈالرز کی امداد فراہم کی ہے جو برما کے اندر اور باہر بے گھر ہو چکی ہيں.


    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    digitaloutreach@state.gov

    www.state.gov

    https://twitter.com/USDOSDOT_Urdu

    http://www.facebook.com/USDOTUrdu

    https://www.instagram.com/doturdu/

    https://www.flickr.com/photos/usdoturdu/
     
  2. Fawad

    Fawad -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 19, 2007
    پیغامات:
    954
    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    برما کے رخائن صوبے ميں بحران کے ردعمل ميں امريکہ کی جانب سے انسانی ہمدردی کی بنياد پر امداد کی فراہمی


    برما کے رخائن صوبے سے تشدد کے نتيجے ميں بنگلہ ديش نقل مکانی کرنے والے روہنگيا باشندوں کی مدد کے ليے امريکی حکومت اضافی 32 ملين ڈالرز کی امداد فراہم کر رہی ہے۔ رخائن صوبے کے اندر بے گھر ہونے والے اور بنگلہ ديش ميں متاثرہ مقامی مکينوں کے ليے بھی امداد کا بندوبست کيا جا رہا ہے۔

    حاليہ امداد کی فراہمی کے بعد سال 2017 کے ليے خطے ميں برما سے ہجرت کرنے والے پناہ گزينوں اور برما کے اندر بے گھر ہونے والوں کے ليے کل امريکی امداد 95 ملين ڈالرز تک پہنچ گئ ہے۔ يہ ہنگامی اقدامات روہنگيا باشندوں کی فوری انسانی ضروريات اور بے پناہ تکاليف سے ازالے کے ليے امريکی مصمم ارادے اور عزم کے آئينہ دار ہيں۔

    اس امريکی امداد کے ذريعے امريکہ بنگلہ ديش اور برما ميں قريب چار لاکھ پناہ گزينوں کو ہنگامی بنيادوں پر خيمے، خوراک، طبی سہوليات، نفسياتی مدد، پانی، صفائ کے انتظامات اور خاندانوں کے درميان رابطوں کی بحالی کے ساتھ ساتھ ہنگامی صورت حال سے نبردآزما ہونے اور ضروريات زندگی کی ديگر بنيادی سہولتيں فراہم کر رہا ہے۔

    امريکہ کی جانب سے فراہم کی جانے والی امداد خطے ميں متحرک اقوام متحدہ کی مختلف تنظيموں، عالمی اداروں اور غير حکومتی گروہوں کو تعاون فراہم کرنے ميں بھی معاون ثابت ہو گی۔ امريکی حکومت نے تمام فريقین سے مطالبہ کیا ہے کہ برما کے رخائن صوبے ميں لوگوں سے امداد کی مکمل ترسيل کو يقينی بنائيں۔ علاوہ ازيں امريکہ نے ديگر ممالک اور اداروں پر بھی زور ديا ہے کہ بحران سے متاثر ہونے والے عام شہريوں کے ليے انسانی ہمدردی کی بنياد پر مدد فراہم کريں اور اس ضمن ميں اپنا موثر کردار ادا کريں۔

    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    digitaloutreach@state.gov

    www.state.gov

    https://twitter.com/USDOSDOT_Urdu

    http://www.facebook.com/USDOTUrdu

    https://www.instagram.com/doturdu/

    https://www.flickr.com/photos/usdoturdu/
     
  3. Fawad

    Fawad -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 19, 2007
    پیغامات:
    954
    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    اکتوبر2016 سے اب تک امريکی حکومت نے پورے خطے ميں ايسی غير محفوظ آباديوں کو انسانی ہمدردی کی مد ميں تريسٹھ ملين ڈالرز کی امداد فراہم کی ہے جو برما کے اندر اور باہر بے گھر ہو چکی ہيں.

    اقوام متحدہ کے مطابق 35 ممالک اور عالمی تنظيموں نے روہنگيا باشندوں کی بحالی کے ليے امداد فراہم کرنے کی يقینی دہانی کروائ ہے، جس کا مجموعی تخمينہ 335 ملين ڈالرز لگايا گيا ہے۔ اقوام متحدہ کی جانب سے 434 ملين ڈالرز کی امداد کی اپيل کی گئ ہے۔

    امريکی حکومت برما ميں جاری تشدد سے بچنے کے ليے بنگلہ ديش ميں پناہ لينے والے روہنگيا باشندوں کی مدد کے ليے مزيد امداد کی اپيلوں کی بھی جانچ پڑتال کر رہی ہے۔

    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    digitaloutreach@state.gov

    www.state.gov

    https://twitter.com/USDOSDOT_Urdu

    http://www.facebook.com/USDOTUrdu

    https://www.instagram.com/doturdu/

    https://www.flickr.com/photos/usdoturdu/
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں