حدیث میں وارد اچانک مصیبت سے بچنے کی دعا

ابو حسن نے 'مسنون ادعیہ و اذکار' میں ‏مارچ 25, 2018 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. ابو حسن

    ابو حسن محسن

    شمولیت:
    ‏جنوری 21, 2018
    پیغامات:
    409
    سنن ابو داؤد وسنن ترمذی میں یہ حدیث وارد ہے جس میں رسول ﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے امت کو مصیبتوں اور آفات سے بچنے کیلئے دعا سکھالائی اور جنہوں نے یہ روایت کی وہ خود مصیبت میں مبتلا ہوگئے اور وجہ کیا بنی ؟

    وجہ بھی غصہ بنا جس سے رسول ﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں بچنے کا حکم دیا ہے اور غصہ کی حالت میں وہ یہ دعا پڑھنا بھول گئے

    اس سے ہمیں یہ سبق ملتا ہے کہ غصہ کی حالت میں مؤمن کبھی کبھی بڑی غلطی کر بیٹھتا ہے اور پھر مصیبت اسے آ دبوچتی ہے:cry:

    ----------------
    عن أبان بن عثمان عن عثمان بن عفان رضي الله عنه قال سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ

    مَنْ قَالَ بِسْمِ اللَّهِ الَّذِي لَا يَضُرُّ مَعَ اسْمِهِ شَيْءٌ فِي الْأَرْضِ وَلَا فِي السَّمَاءِ وَهُوَ السَّمِيعُ الْعَلِيمُ ثَلَاثَ مَرَّاتٍ لَمْ تُصِبْهُ فَجْأَةُ بَلَاءٍ حَتَّى يُصْبِحَ ، وَمَنْ قَالَهَا حِينَ يُصْبِحُ ثَلَاثُ مَرَّاتٍ لَمْ تُصِبْهُ فَجْأَةُ بَلَاءٍ حَتَّى يُمْسِيَ

    وقَالَ فَأَصَابَ أَبَانَ بْنَ عُثْمَانَ الْفَالِجُ ، فَجَعَلَ الرَّجُلُ الَّذِي سَمِعَ مِنْهُ الْحَدِيثَ يَنْظُرُ إِلَيْهِ ،
    فَقَالَ لَهُ مَا لَكَ تَنْظُرُ إِلَيَّ ؟
    فَوَاللَّهِ مَا كَذَبْتُ عَلَى عُثْمَانَ وَلَا كَذَبَ عُثْمَانُ عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، وَلَكِنَّ الْيَوْمَ الَّذِي أَصَابَنِي فِيهِ مَا أَصَابَنِي غَضِبْتُ فَنَسِيتُ أَنْ أَقُولَهَا .
    رواه أبو داود (5088) ، ورواه الترمذي في سننه (رقم/3388



    سیدنا عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول ﷲ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا

    آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے تھے ” جس نے ( شام کو ) تین بار یہ دعا پڑھ لی ‘ اسے صبح تک کوئی اچانک مصیبت نہیں آئے گی

    بِسْمِ اللَّهِ الَّذِي لَا يَضُرُّ مَعَ اسْمِهِ شَيْءٌ فِي الْأَرْضِ وَلَا فِي السَّمَاءِ وَهُوَ السَّمِيعُ الْعَلِيم

    ﷲ کے نام سے ، وہ ذات کہ اس کے نام سے کوئی چیز زمین میں ہو یا آسمان میں ‘ نقصان نہیں دے سکتی اور وہ خوب سنتا ہے اور خوب جانتا ہے ۔

    اور جس نے صبح کے وقت تین بار یہ دعا پڑھ لی اسے شام تک کوئی اچانک مصیبت نہیں آئے گی ۔

    راوی نے بیان کیا کہ اس حدیث کے روایت کرنے والے ابان بن عثمان کو فالج ہو گیا تھا تو ان سے حدیث سننے والا ان کو تعجب سے دیکھنے لگا ( کہ پھر یہ فالج کیونکر ہو گیا ؟ )

    تو انہوں نے کہا کیا ہوا ؟ مجھے دیکھتے کیا ہو ؟

    ﷲ کی قسم ! میں نے سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ پر جھوٹ نہیں بولا ہے اور نہ سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ نے رسول ﷲ صلی اللہ علیہ وسلم پر جھوٹ بولا ہے ۔ لیکن جس دن مجھے یہ فالج ہوا میں اس دن غصے میں تھا اور یہ کلمات پڑھنا بھول گیا تھا ۔

    سنن ابو داؤد 5088 ، سنن ترمذی 3388
     
    Last edited: ‏مارچ 25, 2018
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
  2. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,398
    جزاک اللہ خیرا شیخ!
     
    • ظریفانہ ظریفانہ x 1
  3. ابو حسن

    ابو حسن محسن

    شمولیت:
    ‏جنوری 21, 2018
    پیغامات:
    409
    وایاکم

    شاہ جی میں " شیخ " نہيں " میاں " ہوں لیکن شریف برادران والا نہیں بلکہ سادہ میاں ہوں
     
    Last edited: ‏مارچ 26, 2018
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
    • دلچسپ دلچسپ x 1
  4. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    شمولیت:
    ‏دسمبر 20, 2010
    پیغامات:
    7,316
    جزاک اللہ خیرا
     
    • حوصلہ افزا حوصلہ افزا x 1

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں