آپ کا اس بارے میں کیاخیال ہے۔۔۔

آزاد نے 'آپ کے سوال / ہمارے جواب' میں ‏فروری 16, 2009 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. آزاد

    آزاد ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏دسمبر 21, 2007
    پیغامات:
    4,558
    السلام علیکم ساتھیو!
    پچھلے دنوں مجھے ایک SMS آیا ہے جو میں چاہتا ہوں کہ آپ سے شیئر کروں آپ بتائیے آپ کا اس بارے میں کیاخیال ہے۔۔۔


    1۔حلیم کو آگ پر چڑھادیا
    2۔حلیم کو گھوٹا لگایا
    3۔حیلم جل گیا
    4۔حلیم خراب ہوگیا
    وغیرہ وغیرہ

    حلیم جو کہ اللہ تعالٰی کا صفاتی نام ہے ،جس کے معنی ہیں ”بردبار”
    ہم نے اس لفظ کو کھانے کی ایک ڈش کا نام دے دیا ہے۔جب کہ ہمارے کھانے کی اس ڈش کا صحیح نام ”دلیم (daleem)“ ہے جو کی ”دال چہ“ یا ”دلیہ“ سے نکلا ہے۔۔۔
     
  2. فرینڈ

    فرینڈ -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏مئی 30, 2008
    پیغامات:
    10,709
    جی ہاں میں‌ نے بھی یہ میسیج پڑھا تھا اور پُوچھنے والی ہی تھی۔
     
  3. دانیال ابیر

    دانیال ابیر محسن

    شمولیت:
    ‏ستمبر 10, 2008
    پیغامات:
    8,415
    آپ کے اس میسیج مجھے اپنے ایک استاد کی بات یاد آگئی کہ بحث کو شروع کرنے کے لئے کسی موضوع کی کوئی ضرورت نہیں ہے جہاں سے چاہو شروع کردو۔ ۔ ۔ میرے خیال میں اس پر بات کرنا وقت کا ضیاع ہے ، جس نے حلیم کہنا ہے وہ کہتا رہے گا اور جس نے دلیم ثابت کرنا ہے وہ اپنا وقت ضائع کرتا رہے گا
     
  4. فتاة القرآن

    فتاة القرآن -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 30, 2008
    پیغامات:
    1,444
    آپ کی بات غلط ہے بھائی
    اسے وقت کا ضائع نہے بلکہ طاعہ فی اللہ ہوگا کیونکہ یہ امر بالمعروف ہے
    اور امر بالمعروف امہ محمدیہ پر واجب ہے
    باقی ھدایت اللہ کا کام ہے
    ہمیں یہ بات مختل فارم کے ذریعے نشر کرنا چاہیے اور کثرت سے میل کے ذریعے اپنے دوستوں وباخبر کرنا چاہیے یقینا کوئی جان لینے کے بعد جان بوجھ کر اپنے رب کے نام کا ایسے مذاق نہیں اڑاےگا
    اور شکریہ ان بھائی کا جنھوں نے اس طرف توجہ دلائی میں اس سے بے خبر تھی لیکن اب یہ کلمہ میرےگھر میں کسی کے منہ پر آنے نہیں آئے گا
     
  5. دانیال ابیر

    دانیال ابیر محسن

    شمولیت:
    ‏ستمبر 10, 2008
    پیغامات:
    8,415
    سسٹر میں آپکی بات سو پورا اتفاق کرتا ہوں کہ ایسا نہیں ہونا چاہیئے اور یہ بات میرے آپ کے کہنے سے پہلے بلکہ صدیوں سے موضوع بحث بنی ہوئی ہے ہم یہاں ہر سال محرم میں یہ دیگیں پکتی ہوئی دیکھتے جو راتوں کو کالی کر کے بنائی جاتی ہیں اور پیچھے بیک گراؤنڈ میں شریا گھوشال کی سی دی چل رہی ہوتی ہے، "تیری چہرے سے نظر ہٹنی نہیں کیا ہم کریں، اور سائڈ میں کچھ جانباز تاش سے دل بہلا رہے ہوتے ہیں کیونکہ انہوں نے گھوٹا مارنا ہوتا ہے ۔ ۔ ۔۔ یہ غیر اسلامی افکار اب ہمارے معاشرے میں عام ہیں اور مقام افسوس یہ ہے ان کوئی دلیل بھی نہیں ہے، ایک منع کرتا ہے تو دوسرا اسکو کافر گردانتا ہے،

    جہاں تک نام کا تعلق ہے تو حقیقت میں یہ ایک فضول بحث ہے، جذباتی ہونے سے دین نہیں پھیلتا ہے، اگر کوئی حلیم کہتا ہے تو اسکو آپ روک نہیں سکتے، کیا آپ روک لینگی ؟ وہ لغت لے آئے گا کہ حلیم کے ایک معنی اردو میں یہ بھی ہیں، اور دلیل میں ہزاروں کوٹیشنز ہونگی جید علما کی ۔ ۔ ۔

    اب ذرا غور کیجئے اللہ پاک کا بابرکت نام ہے "کریم "

    اسکو خوجہ جماعت کے لیڈر نے بظور نام اپنایا ہے، جو نا صرف غیر مسلم ہے بلکہ اس کے گناہوں کی لمبی فہرست بھی ہے جب وہ پاکستان آتا ہے تو اسکو سرکاری پرٹوکول دیا جاتا ہے، لڑکیاں اپنے بالوں کو زمین پر الٹا لیٹ کر پھیلاتی ہیں تو موصوف جوتوں سمیت چلتے ہوئے کرسی تک جاتے ہیںیہ بات کوئی افسانہ نہیں حقیقت ہے اور سب ہی جانتے ہیں، مگر ان کو اب بھی مسلم گردانا جاتا ہے اور لفظ روحانی پیشوا ساتھ لگا دیا جاتا ہے، اب ان صاحب کا نام ہے ، پرنس کریم آغا خان ۔ ۔۔ ۔۔۔

    آپ کے خیال میں کیا ہم سب ملکر ان کے نام کے خلاف بھی مذمتی تحریک چلائیں کہ اس مشرک ، فاسق اور فاجر کو پھانسی پر چڑھاؤ یہ اللہ پاک کے نام کی بے حرمتی کر رہا ہے،

    سسسٹر یہ تو ایک زندہ شخص ہے جو روز گناہ کرتا ہے جبکہ حلیم محض ایک دیگ ہے کم از کم یہ بے چاری دیگ لڑکیوں کے پالوں پر تو نہیں چلتی ۔ ۔ ۔

    میں نے اس تناظر میں کہا تھا کہ یہ بحث فضول ہے، ورنہ کافی سارے اسمگلر ٹائپ لوگ ہمارے اطراف میں مل جاتے ہیں جیسے

    شکور خان (ٹرانسپورٹر ہے اس کے گھر پر شراب کی محفلیں روز سجتی ہیں۔ ۔ ۔ اب شکور تو اللہ کا صفاتی نام ہے کیا آپ شکور خان کو پھانسی چڑھا سکتی ہیں؟
     
  6. باذوق

    باذوق -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏جون 10, 2007
    پیغامات:
    5,623
    السلام علیکم !
    میں‌ بھائی دانیال ابیر کے خیالات کی تائید کرتا ہوں۔
    اس موضوع پر اس سے پہلے بھی کسی جگہ بحث ہو چکی ہے۔ مجھے وہ ربط یاد نہیں ورنہ یہاں‌ ضرور دیتا۔
     
  7. شفقت الرحمن

    شفقت الرحمن ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏جون 27, 2008
    پیغامات:
    753
    سوال کھانے کی ڈش کا نام ''حلیم'' کیسا ہے؟جبکہ یہ اللہ کا صفاتی نام ہے

    جواب : الحمد للہ و الصلاة و السلام علی رسول اللہ اما بعد!

    کسی بھی چیز کا وہ نام رکھنا جائز ہے جو شریعت کے مخالف نہ ہو ، مثال کے طور پر کسی آدمی کا نام عبد النبی رکھنا وغیرہ جو کہ غلط ہے

    دوسری بات یہ ہے کہ ''حلیم'' ڈش کا نام ہے اردو زبان میں جبکہ ''الحلیم'' اللہ عز وجل کا صفاتی نام ہے عربی میں تو میرا سوال ہے کہ کیا ڈش کانام لیتے ہو ئے کوئی اس بات کا خیال دل میں لاتا ہے کہ میں اللہ تعالی کا صفاتی نام لے رہا ہو یا دوسرے لفظوں میں یوں کہیے کہ کیا کوئی اللہ کا نام لینے کی نیت کرتا ہے ؟ یقینا نہیں (بلکہ کئی لوگوں کو تو اس چیز کا علم ہی نہیں کہ ''الحلیم '' بھی اللہ تعالی کا صفاتی نام ہے )جب معاملہ ایسے ہی ہے تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کی یہ روایت ہمارے لئے فیصل ہے :

    عن عمر بن الخطاب رضی اللہ عنہ قال سمعت النبی صلی اللہ علیہ و سلم یقول : انما الاعمال بالنیات
    صحیح البخاری حدیث نمبر :١

    ترجمہ: عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے نبی صلی اللہ علیہ و سلم کو کہتے ہوئے سنا : اعمال کا دارو مدار نیت پر ہے۔

    لہذا اگر کوئی شخص اس انداز سے لفظ ''حلیم'' کو بولتا ہے اور اس نیت سے کہ یہ اللہ کا نام ہے اور میں اسکی اہانت کررہا ہوں (العیاذ باللہ ) تو یہ غلط ہے لیکن یہ تو ناممکن اور محال سے بھی کوسوں دور ہے ۔

    تیسری بات یہ ہے کہ اس ڈش کا صحیح نام بھی ''حلیم ''ہی ہے نہ کہ ''دلیم'' دیکھیں مندرجہ ذیل ربط
    لفظ دلیم کیلئے یہ ربط دیکھیں

    چنانچہ ''حلیم '' نامی ڈش کو ''حلیم '' کہنے میں کو حرج نہیں یہ آپکی مرضی ہے کہ آپ اسکو ''دلیم ''سے تبدیل کریں یا نہ کریں

    چوتھی بات میں فتاة القرآن بہن سے کہنا چاہوں گا کہ اگر آپ یہ سمجھتی ہیں کہ آپ کے گھر میں لفظ ''حلیم'' بول کر اللہ عزوجل کے صفاتی نام کی نیت کر کے اسکا مذاق اڑایا جاتا ہے تو بالکل آپ پر ضروری ہے کہ اسکو اپنے گھر میں تبدیل کریں اور ان لوگوں کو سمجھائیں اور اللہ کی پکڑ سے ڈرائیں اللہ تعالی آپکا حامی و ناصر ہو ۔

    ھذا ما عندی و اللہ اعلم بالصواب

    و صلی اللہ علی نبینا محمد

    و السلام علیکم و رحمة اللہ و برکاتہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  8. فتاة القرآن

    فتاة القرآن -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 30, 2008
    پیغامات:
    1,444
    بھائی میں نہیں سمجھتی کہ یہ بات جان لینے کے بعد ھم ایسا جملہ منہ پر لائیں جس میں توہین ہو اللہ کے صفاتی نام کی اور ایسی چیز جس میں شک ہو اسے چھوڑ دینے میں بھلائی ہے اسکی دلیل میں آپکو یہ دونگی
    قال رسول صلى اللہ عليہ وسلم: دع ما يربيك الى مالا يربيك

    اور بھائی میں آپکو بتاؤں کہ میری اس بات کے بتا دینے کے بعد اب گھر میں تو کوئی حلیم کہتا نہیں ساتھ میں ابو کے افیس کے اکثر دوستوں نے بھی توبہ کی ہے کھانے کو حلیم کھنے سےالحمدللہ
    ہم اللہ کے صفاتی نام کی توہین جان بوجھ کرنہیں کر سکتے
    نیت کی اگر بات کی جائے تو بھائی آپکو وہ حدیث بھی یاد ہوگی کہ انسان کے عذاب میں جانے کے اہم اسباب میں سے ایک سبب اسکی زبان ہے
    اس لئے میں یہ بات نہیں مان سکتی کہ ایک مسلم جان لینے کے بعد ایسے غلط جملہ زبان سے ادا کرے جس میں اللہ کے صفاتی نام کی توہین ہو

    دوسری بات دانیال بھائی کی پرنس کریم آغا خان ۔ ۔۔ ۔۔۔ نام کا
    تو بھائی کیا آپ نے کبھی اس شخص کانام لے کر کوئی ایسا جملہ بولا جیسے وہ کھتے ہیں کہ وہ جل گیا یا پکایا وغیرہ وغیرہ
    اور اگر کبھی اس کے غلط کاموں اور گناہوں کا ذکر کرتے بھی ہونگے تو کبھی بھی خالی کریم نھیں کہتے ہونگے کریم آغا کہتے ہونگے یا کوئی نام ساتھ ضرور لگتا ہوگا تو وہ اسکی پہچان ہے ویسے اگر وہ شخص گناہ گار ہے تو یہ حساب اسکے اور رب کے بیج ہوگا لیکن کیا حلیم والا مسالہ بھی ایسا ہی ہوگا؟
    وہ تو آپکے ہاتھ میں ہے آپ اگر جان لینے کہ بعد بھی اپنے رب کے صفاتی نام کی ایسی توہین کرنا معمولی سمجھتے ہیں تو مجھے واللہ حیرانی ہے آپکی سوچ پر
    سوری بھائی میں آپ تینوں بھائیوں سے چھوٹی ہوں مجھے حق نہیں آپ لوگوں کی مخالف بات کرنے کی
    لیکن مجھے یہ صحیح نہیں لگا اس لئے بتادیا
    آپ لوگوں کو میری بات پر غصہ آئے تو سوری پلئیز
     
  9. فتاة القرآن

    فتاة القرآن -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 30, 2008
    پیغامات:
    1,444
    بھائی میں بھی آپکو اسی حدیث کی دلیل دے کر کھوں گی کہ اگر آپ کہتے ہیں کہ

    اعمال کا دارو مدار نیت پر ہے۔

    تو بھائی میں کھونگی کہ اگر کوئی اپنے رب کے صفاتی نام کی تعظیم کی نیت سے حلیم کی جگہ دلیم کہے تو کیا وہ آپکے خیال میں اجر کا مستحق نا ہوگا؟؟؟؟
     
  10. شفقت الرحمن

    شفقت الرحمن ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏جون 27, 2008
    پیغامات:
    753
    فتاة القرآن نے لکھا:
    محترمہ اگرآپ کو اس میں شک ہے تو بے شک آپ نام تبدیل کریں آپ کو کوئی نہیں روکے گا ، لیکن مجھے اس بات پر یقین ہے کہ میں ''حلیم'' سے مراد اللہ کی ذات نہیں لیتا اور اللہ کی ذات کا نام ''الحلیم'' ہے

    اور رہی بات کہ اگر کوئی شخص نیت یہ کرے کہ اللہ کے صفاتی نام کی حفاظت کرنی ہے تو کیا اسکو ثواب ملے گا ؟ اس پر پھر میرا سوال ہے کہ اللہ کے اس صفاتی نام کی بے حرمتی کس نے کی ہے ؟ یقینا جواب نہیں میں ہوگا (ان شاء اللہ) توحفاظت کس بات کی؟؟؟

    ہاں اگر کوئی شخص اس گناہ کا مرتکب ہوا پھر اس نے توبہ کی تو اسکو یقینا اللہ کے ہاں ثواب ملے گا ۔ ان شاء اللہ
    و السلام
     
    • متفق متفق x 1
  11. فتاة القرآن

    فتاة القرآن -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 30, 2008
    پیغامات:
    1,444
    1۔حلیم کو آگ پر چڑھادیا
    2۔حلیم کو گھوٹا لگایا
    3۔حیلم جل گیا
    4۔حلیم خراب ہوگیا
    وغیرہ وغیرہ


    بھائی آپ کو کیوں ان جملوں میں اللہ کے صفاتی نام کی توہین نھی لگتی؟
     
  12. ساجد تاج

    ساجد تاج -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 24, 2008
    پیغامات:
    38,751
    میں یہ سمجھتا ہوں کہ اب اس پر اور بحث نہیں ہونی چاہیے۔

    انسانوں کے ناموں‌میں‌سے کچھ نام ایسے ہیں‌جو اللہ کے اور ہمارے رسول حضرت محمد کے صفاتی ناموں میں‌سے ہوتے ہیں۔لیکن زیادہ تر یہ ہوتا ہے کہ ہم نام کو بگاڑتے رہتے ہیں۔جب کہ ہم جانتے ہیں‌ کہ یہ غلط ہے کیا ہم رکتے ہیں نہیں بے شک نہیں۔ہمیں‌چاہیے کہ ہم اب اس پر بحث نہ کریں۔ہم میں‌سے کوئی عالم نہیں ہے جو ہمیں‌ہر چیز سے آگاہ کرے جس کو جتنا پتہ تھا وہ سب بتا چکے ہیں،
     
  13. ابن عمر

    ابن عمر رحمہ اللہ بانی اردو مجلس فورم

    شمولیت:
    ‏نومبر 16, 2006
    پیغامات:
    13,354
    مولانا شفقت الرحمٰن (ابن مبارک) پاکستان کے ایک مستند اور معروف جامعہ کے فارغ التحصیل عالمِ دین ہیں اور اس وقت سعودی عرب کے ایک معروف ادارہ کے‌شعبہ دعوت و تبلیغ سے منسلک ہیں ۔ ان کے علاوہ اور بہت علماء کرام اور طلباء کرام ہمارے درمیان موجود ہیں ان سب کا تفصیلی تعارف پھر کبھی سہی ان شاءاللہ
     
    • متفق متفق x 1
  14. حیدرآبادی

    حیدرآبادی -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 14, 2007
    پیغامات:
    1,319
    کون ایسا مسلمان ہے جو اپنے رب کے صفاتی نام کی توہین کرنا معمولی بات سمجھتا ہو؟

    جہاں ہمارا علم کم ہو وہاں خاموش رہنا چاہئے بس۔
    ہمارے مفروضات اور قیاسات کے مقابلے میں تو کسی عالمِ دین کا قول ہی معتبر ہوتا ہے۔ اور جیسا کہ شداد بھائی نے بتایا ہے کہ :
    لہذا ابن مبارک بھائی نے جو کچھ اور جتنا کہا ہے ، اس کا اعتبار کیا جانا چاہئے اور اپنے عقلی مفروضات کو ایک طرف رکھ کر خاموش ہو جانا چاہئے۔

    اگر کوئی ایسا کہتا ہے کہ :
    ہم اللہ کے صفاتی نام کی توہین جان بوجھ کر نہیں کر سکتے
    تو ایسا کہنے والے سے یہ سوال پوچھا جا سکتا ہے کہ:
    ہم کو کیسے علم ہوگا کہ سامنے والا "حلیم جل گیا" کہتے وقت "جان بوجھ کر" اللہ کا صفاتی نام ذہن میں لا رہا ہے؟؟
    دنیا میں ہزاروں مسلمان ایسے ہیں جن کا نام "محمد" ہے۔ اور دنیا میں ہزاروں بدمعاش ایسے ہیں جو ایسے افراد سے جب لڑ بیٹھتے ہیں تو انہیں اے محمد ! کہہ کر محمد نام والے شخص کو بےتحاشہ گالیاں دیتے ہیں۔
    اب کیا ان تمام بدمعاشوں پر ہم "توہینِ رسالت" کا الزام لگا دیں گے؟؟

    امید ہے کہ ہمارے مشورے کا برا نہیں مانا جائے گا۔ شکریہ۔
     
    Last edited by a moderator: ‏مارچ 4, 2009
  15. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,942
    السلام علیکم
    بھائی ابن مبارک کی بات صحیح ہے ۔۔۔ اگر اسی حلیم کو '' ا ل '' کے ساتھ بولا جائے تو صحیح نہیں ہو گا ۔۔۔ جس طرح کسی کا نام '' الشکور'' رکھ دیا جائے تویہ بھی صحیح نہیں ۔۔۔ اس لیے '' عبد الشکور '' رکھنے سے یہ نام صحیح ہو جاتا ہے ۔۔۔ حلیم عام نام ہے ۔۔۔ اسمیں اللہ کے نام کی کوئی مشابہت نہیں ۔۔۔

    ہاں ایک اور صورت ہو سکتی ہے کہ مثلا آپ کسی کا نام '' حلیم '' دیکھیں تو اس کو سمجھا دیں کہ بھائی آپ اس کو '' عبد الحلیم '' رکھ لیں ۔۔۔ ان شا ء اللہ اس سے فائدہ ہو گا ۔

    پاشا بھائی ۔۔۔ دوسروں کو سمجھانا کہ جذبات میں نہیں آنا چاہے اور خود اس کے بر عکس کرنا اسلام اسکی اجازت نہیں دیتا ۔۔۔ اور ایک ہی رکن کو مختلف مقامات پر مختلف طریقسے تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔۔۔ ۔۔ حالانکہ کسی طور پر یہ مناسب نہیں ۔۔۔ ۔۔ اور یہ بھی کہیں نہیں لکھا کہ جو عالم و ہی اسلام کے کسی مسئلے پر بحث کرے یا جواب دے ۔۔۔۔ بللکہ بلغو عنی ولو آیہ میں اس کی وضاحت نہیں کی گئی کہ یہ صرف عالم کا حق ہے ۔۔۔ اگر ایسی بات ہے تو پھر نام نہاد مقلدین کو الزام کیوں ۔۔۔ یہ اور بات ہے کہ بعض مسائل ایسے ہوتے ہیں جس میں علماء حق کی رائے مقدم ہوتی ہے ۔۔

    اور برائے مہربانی ۔۔۔ اگر کسی کو سمجھانا مقصود ہو تو اس کو ذاتی پیغام سے سمجھایا جا سکتا ہے ۔۔۔۔ بجائے اس کہ جس کی لاٹھی اس کی بھینس کے مصداق ہر جگہ ہی لٹھ لے کر پہچ جائیں ۔۔ اس اس کی اصلاح ہو نہ ہو ۔ لیکن جو لٹھ لے کر جائے گا کوئی اچھا تاثر نہیں چھوڑے گا ۔

    کسی بھی غلطی پر پیشگی معذرت
     
  16. منہج سلف

    منہج سلف --- V . I . P ---

    شمولیت:
    ‏اگست 9, 2007
    پیغامات:
    5,047
    السلام علیکم مجاہد بھائی!
    میں آپ کی بات کی مکمل تائید کرتا ہوں۔
    ان شاءاللہ ہر ممبر آئندہ اس چيز کا خاص خیال رکھے گا۔
    والسلام علیکم
     
  17. ساجد تاج

    ساجد تاج -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 24, 2008
    پیغامات:
    38,751
    اوکے بھائی میں‌آپ ک جواب کا انتظار کروں گا شکریہ
     
  18. دانیال ابیر

    دانیال ابیر محسن

    شمولیت:
    ‏ستمبر 10, 2008
    پیغامات:
    8,415
    بھائی ابن مبارک ہمارے انتہائی معتبر ساتھی ہیں میں تو اس بات پر ان کا حد سے زیادہ مشکور ہوں کیونکہ یہ اپنی بے پناہ مصروفیات میں قیمتی وقت نکال کر ہمارے علم میں اضافہ کرتے ہیں، شداد بھائی سے درخواست ہے کہ تھوڑا سا وقت نکال کر بھائی ابن مبارک کا تعارف مجلس پر پیش کر دیا جائے تاکہ ساتھیوں کو ان کی علمی قابلیت سے آگاہی ہو۔

    اور میں ذاتی طور پر ابن مبارک بھائی سے درخواست کرونگا کہ وہ ہم جیسے کم علم ارکان کو علمی فیض پہنچاتے رہیں

    باقی رہی بات اختلاف رائے کی ! تو وہ ہر جگہ ہوتا ہے اگر ایسا نہ ہو تو ماحول جمود کا شکار ہوجاتا ہے

    صرف ایک درخواست کرونگا کہ اختلاف رائے ضرور رکھئیے مگر اخلاقی قدروں کی حدود کا بھی خیال رکھا جائے تو اس میں کچھ مضائقہ نہیں اس سے ماحول پاکیزہ بھی رہتا ہے اور خوشگوار بھی

    :)
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں