کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں

عائشہ نے 'کلامِ سُخن وَر' میں ‏فروری 5, 2017 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,496
    کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں
    شاعر: سلیم ناز بریلوی

    کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں
    سسکتی آنکھوں میں مثل کاجل وہاں کی مٹی لگاؤں گا میں
    اے میری وادی ترس رہا ہوں میں مدتوں سے تری مہک کو
    میں دربدر پھر رہا ہوں کب سے ۔۔۔
    مگر تیری راہ میں اپنی پلکیں اور اپنے آنسو بچھاؤں گا میں
    کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں
    سسکتی آنکھوں میں مثل کاجل وہاں کی مٹی لگاؤں گا میں

    میں اپنے ہی گھر سے ہی بے دخل ہوں کہ جرم میرا ہے بے گناہی
    میں دور رہ کر بھی تجھ سے لیکن ترا ہی غازی ترا سپاہی
    جلا وطن ہوں جو میں تو کیا ہے ترا ہی نعرہ لگاؤں گا میں
    جہاں جہاں بھی رہوں گا زندہ ترا ہی ۔۔۔
    کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں
    سسکتی آنکھوں میں مثل کاجل وہاں کی مٹی لگاؤں گا میں

    جو بند ہیں کان دنیا بھر کے میں تیری چیخوں سے کھول دوں گا
    ضمیرِ انسانیت اے وادی، میں تیرے اشکوں میں گھول دوں گا
    گداز کر دوں گا پتھروں کو، ہر ایک دل کو رلاؤں گا میں
    زمانے بھر کو تیری کہانی، ترا فسانہ سناؤں گا میں
    کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں
    سسکتی آنکھوں میں مثل کاجل وہاں کی مٹی لگاؤں گا میں

    وہ میری ماؤں کے روتے چہرے، وہ میری بہنوں کے بھیگے آنچل
    وہ میرے بچوں کے ۔۔۔ لاشے ، وہ خوں میں ڈوبی ہوئی میری ڈل
    لٹی ہوئی عزتیں، جلے گھر کسی سے کچھ نہ چھپاؤں گا میں
    ہر ایک تصویر بربریت زمانے بھر کو دکھاؤں گا میں
    کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں
    سسکتی آنکھوں میں مثل کاجل وہاں کی مٹی لگاؤں گا میں

    میں تیرے ہر ظلم و جور کا اب بھرا جنازہ نکال دوں گا
    میں حضرت بل کے در سے اک دن گھسیٹ کر تجھ کو ڈال دوں گا
    تمام دنیا کو ہند تیرا کریہہ چہرہ دکھاؤں گا میں
    کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں
    سسکتی آنکھوں میں مثل کاجل وہاں کی مٹی لگاؤں گا میں

    وہ دن ہے اب جلد آنے والا جب ہو گی آزاد میری وادی
    وہ یوم فتح عظیم جس دن منایا جائے گا جشن شادی
    پھر اپنی وادی کی ہر گلی کو دلہن کی صورت سجاؤں گا میں
    کفن تو پہنا ہوا پر اب لہو کی مہندی رچاؤں گا میں
    کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں
    سسکتی آنکھوں میں مثل کاجل وہاں کی مٹی لگاؤں گا میں

    ہوا جو آئے گی تجھ کو چھو کر میں اس سے پوچھوں گا حال تیرا
    ۔۔۔ ہے فتح کا یہی سال تیرا
    طویل خونی لکیر اس دن کھرچ کھرچ کر مٹاؤں گا میں
    تیری فتح تک یہی ترانہ قدم قدم گنگناؤں گا میں
    کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں
    سسکتی آنکھوں میں مثل کاجل وہاں کی مٹی لگاؤں گا میں

    صبا کے قرطاس پر قلم سے تری ہی صورت گری کروں گا
    تری ہی خاطر جیا ہوں اب تک، میں تیری راہوں میں ہی مروں گا
    میں ناز ہوں کاشمیر تیرا، تجھی پہ سب کچھ لٹاؤں گا میں
    میں تیرا شاعر، ترا مغنی، ترے ہی نغمات گاؤں گا میں
    کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں
    کبھی تو آئے گا ایسا دن بھی جب اپنی جنت میں جاؤں گا میں
    سسکتی آنکھوں میں مثل کاجل وہاں کی مٹی لگاؤں گا میں
    آڈیو ربط
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 3
  2. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    شمولیت:
    ‏دسمبر 20, 2010
    پیغامات:
    7,316
    جزاک اللہ خیرا سسٹر
    شئرنگ کا شکریہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
  3. Ishauq

    Ishauq -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏فروری 2, 2012
    پیغامات:
    9,613
    بہت عمدہ ۔
    جزاک اللہ خیرا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 3
  4. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,496
    وایاکم
     
  5. عائشہ مرتضی

    عائشہ مرتضی نوآموز.

    شمولیت:
    ‏جنوری 28, 2019
    پیغامات:
    13
    گداز کردوں گا پتھروں کو
    ہر ایک دل کو رلاؤنگا میں..واہ
    حق بات ہے!! تجدید کا شکریہ میم
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں